PBM

مینجنگ ڈائریکٹر پاکستان بیت المال کا پیغام

غربت کسی بھی ملک کی یکجہتی کے لئے سب سے بڑا خطرہ ہوتا ہے۔ یہ ملکی معاملات کے حوالے سے قوم کی آزاد اور خودمختار سوچ و فکر کو متاثر کرتی ہے۔ پاکستان بیت المال کا قیام ۱۹۹۲ میں ہوا جواس وقت کے وزیر اعظم اور آج کے وزیر اعظم جناب میاں محمد نواز شریف نے غریب ترین افراد کی مدد کو بنیاد ی مقصد بناتے ہوئے قائم کیا۔یہ ادارہ حقیقی معنوں میں پاکستان کو ایک اسلامی فلاحی ریاست بنانے کے تصور کی عکاسی کرتا ہے۔

میں نے پاکستان بیت المال کے ذریعے ملک سے غربت کی لعنت کے خاتمے کے لئے اپنا کردار فعال طریقے سے ادا کرنے کا عزم کر رکھا ہے۔ میری یہ بنیادی ذمہ داری ہے کہ میں قطع نظر مذہب‘ عمر‘ جنس‘ ذات‘ نسل یا سیاسی وابستگی کے صحت‘ تعلیم‘ خواتین کو بااختیار بنانے اور بحالی سمیت سماجی تحفظ کے میدان میں اپنے ملک کے کمزور لوگوں کی خدمت اور ان کو معاشرے میں عزت کی زندگی گزارنے میں دستگیری کروں۔

ان سماجی مسائل کو حل کرنے کے لئے ایک جامع منصوبہ بندی کی ضرورت ہے جو کہ مقداری‘ معیاری‘ سائنسی اور دیگر ماخوذ اور مربوط فکری حقائق/نظریات پر مبنی ہو۔ میں نے خواتین کے مسائل‘ بیروزگاری‘ بھوک‘ ناخواندگی‘ بیماری‘ علالت بوجہ بزرگی‘ عورت کا کمتر معیار زندگی اور دیگر مخدوش معاشرتی مسائل جیسی آزمائشوں سے نبرد آزما ہونے کا مصمّم ارادہ کر رکھا ہے۔

اس ادارے کے قیام کے پس منظر میں موجود حقیقی ہدف کے حصول کے لئے میں نے اپنے ٹی فارمولہ کے اصول پر مبنی تصور کو عملی جامہ پہنانے کابھی عزم کر رکھا ہے۔

T۔ Transparancy ٭ تمام شعبوں کے معاملات میں شفافیت
E۔ Efficiency ٭ غریب نواز خدمات میں کارکردگی
A۔ Accessability ٭ پاکستان کے تمام شہروں‘ دیہی و دور دراز علاقہ جات تک رسائی

 

اس سلسلہ میں کمپیوٹر سے منسلک مربوط عملی ڈھانچے سے وابستہ خودکار انتظامی نظام کا ماحول جو کہ لین دین‘ رابطہ کاری‘ منصوبہ بندی‘ انتطام و انصرام اور کارکردگی کے معیار میں بہتری کے حصول کے لئے متعارف کروا دیا گیا ہے۔ یہ اقدامات نہ صرف پاکستان بیت المال کی بین الاقوامی نیک نامی کے حصول میں معاون ثابت ہوں گے بلکہ یہ ادارہ قومی اور بین الاقوامی خیراتی اداروں کے لئے قابل اعتماد ادارہ سمجھا جائے گا۔

بیرسٹر عابد وحید شیخ
مینجنگ ڈائریکٹر
پاکستان بیت المال
E-mail.md@pbm.gov.pk